امت مسلمہ کے اتحاد کے حامی پشتونوں کے اتحاد میں رکاوٹ بنے ہیں/ سینیٹر باز محمد خان

قبائلی علاقہ فاٹا کو ترقیاتی پیکجز کیساتھ خیبر پختونخوا میں ضم کیا جائے

Baz Muhammad Khan

بنوں. عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی نائب صدر سینیٹر حاجی باز محمد خان ایڈووکیٹ نے ڈومیل میں شمولیتی جلسہ عام سے خطاب میں کہا ہے کہ عوامی نیشنل پارٹی نے 90کی دہائی میں قبائل کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے کیلئے صوبائی اسمبلی میں قرار داد پیش کر چکی ہے آج قبائلی عمائدین ،پارلیمنٹرین تمام خیبر پختونخوا میں انضمام کے حق میں ہیں تو پھر اس کے باوجود انضمام میں تاخیر کیا معنی رکھتی ہے قبائلی علاقہ فاٹا کی خیبر پختونخوا میں انضمام سے ہی پشتونوں کا اتحاد مضمر ہے فاٹا میں لاگو کیا گیا ایف سی آر کا قانون انگریز کی باقیات ہیں اور انگریزوں سے آزادی حاصل کرنے کے بعد ایف سی آر کے قانون سے بھی چھٹکارہ لینا چاہیئے انگریز سے آزادی حاصل کرنے کے باوجود ان کی کھینچی گئی لکیریں پشتون خطہ میں موجود ہیں اُنہوں نے کہا کہ فاٹا اور بلوچستان کے پشتونوں کا اتحاد وقت کی اہم ضرورت ہے اور اس میں کوئی سیاسی سکورنگ نہیں ہو نی چاہیئے قبائلی عوام کو ایک بڑے ترقیاتی پیکجز کیساتھ صوبہ خیبر پختونخوا میں ضم کیا جائے اس موقع پر حلقہ پی کے 71 کے سابق صوبائی وزیر شیر اعظم گروپ کے ملک مجید فقیر ،ملک رشید اللہ ،ملک مانی جان عمرزئی ،ملک محب اللہ ، بانی خان ،محمد اسرائیل خان ،زار محمد خان نیک محمد خان ،زبیب اللہ خان ،سمیع اللہ خان ،رضاء اللہ خان ،سیز اللہ خان ،عبیداللہ خان ،عطاء اللہ خان ،وجاہت اللہ خان ،فزاللہ،کامران اللہ خان ،حمید خان ،منصف اللہ خان ،حسین خان ،وحید خان ،مروت خان ،حمزالی خان ،اول محمد خان ،ابراہیم خان ،شریف اللہ خان ،گل سید خان ،عبداللہ خان اور امان اللہ خان نے اپنے خاندان و ساتھیوں سمیت اے این پی میں شمولیت اختیار کر لی جلسہ سے اے این پی کے ضلعی جنرل سیکرٹری ناز علی خان ،ایف آر بنوں کے صدر حاجی گل نواب خان ،پی کے 71کے امیدوار تیمور باز خان،تحصیل ڈومیل کے صدر ملک عرفان ،نیشنل یوتھ آرگنائزیشن کے رہنماء حکومت پختون و دیگر نے بھی خطاب کیا سینیٹر حاجی باز محمد خان ایڈووکیٹ کی قیادت پر مکمل اعتماد کا اظہار کیاحاجی باز محمد خان ایڈووکیٹ کا کہنا تھا کہ دنیا بھر کے مسلمانوں کے اتحاد کی باتیں کرنے والے نام نہاد لیڈرز نہیں چاہتے کہ پشتون اپنے حقوق کیلئے یکجاء ہو جائیں اُنہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ خیبر پختون خوا اور فاٹا کی آبادی کو حالیہ مردم شماری میں کم ظاہرکی گئی ہے اور یہ گیم وفاق نے صرف اس لئے کھیلا ہے کہ پشتونوں کو وسائل کی تقسیم میں کم حصہ مل سکیں مگر ہم اپنے وسائل پر اپنا اختیار اور مکمل حصہ چاہتے ہیں ۔

وسیم باغی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*